Home » خبریں » Quetta Police Training Center attack 60 martyred 122 hurt

Quetta Police Training Center attack 60 martyred 122 hurt

کوئٹہ : پولیس ٹریننگ سینٹر پرحملے میں 60 اہلکار شہید اور122 زخمی، 3 دہشتگرد بھی ہلاک

quetta-police-training-center-attack-60-martyred-122-hurt

ٹریننگ سینٹر کے ہاسٹل سے 250 سے زائر زیرتربیت اہلکاروں کو بحفاظت بازیاب کرالیا گیا ہے، صوبائی وزیر داخلہ سرفراز بگٹی

کوئٹہ: سریاب کے علاقے میں واقع پولیس ٹریننگ سینٹر پر دہشت گردوں کے حملے کے نتیجے میں 60 اہلکار شہید اور 122 زخمی ہوگئے جب کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے 4 گھنٹے تک جاری رہنے والے آپریشن کے بعد 3 دہشت گردوں کو ہلاک کردیا۔ 

کوئٹہ کے علاقے سریاب میں واقع پولیس ٹریننگ سینٹر پر نامعلوم مسلح افراد نے حملہ کردیا اور تربیت سینٹر سے ملحقہ ہاسٹل میں گھس کر اندھا دھند فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں ریسکیو ذرائع کے مطابق 60 اہلکار شہید اور 122زیرتربیت کیڈٹس زخمی ہوگئے۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے 4 گھنٹے تک جاری رہنے والے آپریشن کے نتیجے میں 250 سے زائد اہلکاروں کو بحفاظت نکالا جب کہ مقابلے میں 3 دہشت گرد بھی مارے گئے۔

quetta-police-training-center-attack-60-martyred-122-hurt

وزیرداخلہ بلوچستان سرفراز بگٹی کے مطابق پولیس کے ٹریننگ سینٹر پر 3  دہشت گردوں نے حملہ کیا اورانہوں نے سب سے پہلے واچ ٹاور پر سنتری کو نشانہ بنایا اور فائرنگ کرتے ہوئے ہاسٹل میں داخل ہوگئے اور اس دوران سیکیورٹی پر تعینات اہلکاروں نے بھی فائرنگ کی جس کے بعد دو طرفہ فائرنگ کا سلسلہ شروع ہوا۔ اطلاع ملنے پر پولیس، ایف سی اور پاک فوج کے دستوں نے فوری طور پر موقع پر پہنچ کر کارروائی کی جس کے دوران 2 دہشت گردوں نے خود کو دھماکے سے اڑالیا جب کہ فائرنگ کے تبادلے میں ایک دہشت گرد بھی مارا گیا۔ انہوں نے کہا کہ 4 گھنٹے کی کوشش کے بعد سیکیورٹی فورسز نے آپریشن مکمل کیا جب کہ بیشتر اہلکار دہشت گردوں کی جانب سے خود کو دھماکے سے اڑانے کے نتیجے میں زخمی ہوئے

quetta-police-training-center-attack-60-martyred-122-hurt

صوبائی وزیرداخلہ کے مطابق آپریشن کے نتیجے میں شہادتوں کی تعداد بڑھنے کا اندیشہ ہے جب کہ صوبائی حکام کے مطابق اب تک   122زخمیوں کو سول اسپتال، سی ایم ایچ اور شیخ زید اسپتال منتقل کیا گیا ہے جن میں پولیس اور ایف سی اہلکار بھی شامل ہیں جب کہ بیشتر زخمیوں کو ٹانگوں پر گولیاں لگی ہیں۔

loading...
 صوبائی حکومت نے ٹریننگ سینٹر پر فائرنگ کی اطلاع ملتے ہی شہر بھر کے اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی ہے جب کہ شہر سے مزید پولیس کی نفری کو فوری طور پر ٹریننگ سینٹر طلب کرلیا۔ فورسز نے ٹریننگ سینٹر کے اطراف کے علاقوں کو بھی سیل کردیا اور علاقے میں ٹریفک کو بھی مکمل طور پر بند کردیا۔
quetta-attack-police-mobile
 دہشت گردوں کے خلاف آپریشن مکمل کرنے کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے آئی جی ایف سی شیرافگن کا کہنا تھا کہ رات 11 بجکر 10 منٹ پر حملے کی اطلاع ملی جس کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں نے فوری طور پر کارروائی کی جب کہ دہشت گردوں کا تعلق لشکرجھنگوی اورالعالمی سے تھا اور انہیں افغانستان سے ہدایات مل رہی تھیں۔ ان کا کہنا تھا کہ کوئیک ریسپانس فورس نے کارروائی کرتے ہوئے ایک دہشتگرد کو ہلاک کیا جس کے بعد 2 خودکش دھماکوں میں زیادہ شہادتیں ہوئیں اور دہشت گردوں کی فائرنگ سے کلئیرنگ تک 4 گھنٹے لگے۔

 وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثنااللہ زہری نے ٹریننگ سینٹر پر حملے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی بلوچستان اور ڈی آئی جی کوئٹہ سے رابطہ کیا اور دہشت گردوں کے خلاف بھرپورکارروائی اور زیر تربیت اہلکاروں کی حفاظت یقینی بنانے کی ہدایت کی۔

 quetta-police-training-center-attack-60-martyred-122-hurtوزیراعلیٰ بلوچستان نے ایکسپریس نیوز سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ رات 11 بجے کے قریب دہشت گردوں نے ٹریننگ سینٹر پر حملہ کیا، ٹریننگ سینٹر کوئٹہ شہر سے دور دیہی علاقے میں ہے جہاں سناٹے کا فائدہ اٹھاتے ہوئے دہشت گرد سینٹر کے پچھلے گیٹ سے داخل ہوئے جو پہاڑی علاقے میں واقع ہے۔ ثنااللہ زہری نے کہا کہ اس طرح کے حملے کی 3 سے 4 دن پہلے انٹیلی جنس اطلاعات تھیں، کوئٹہ شہر میں دہشت گردوں کے داخل ہونے کی اطلاعات موصول ہوئی تھیں جس کے باعث صوبے بھر میں سیکیورٹی ہائی الرٹ تھا لیکن دہشت گرد کوئٹہ شہر میں کارروائی کرنے میں ناکام ہوئے ہیں جس کے بعد انہوں نے سینٹر پر حملے کیا۔ وزیراعلیٰ بلوچستان کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں سے نمٹ لیں گے اور انہیں کیفر کردار تک پہنچائیں گے۔

 دوسری جانب وزیراعظم نوازشریف نے کوئٹہ میں پولیس ٹریننگ سینٹر پر حملے کی شدید مذمت کی ہے۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سینٹر میں موجود زیرتربیت اہلکاروں کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے اور دہشت گردوں کو جلد از جلد کیفر کردار تک پہنچایا جائے جب کہ حملے میں زخمی ہونے والوں کو بہترین طبی سہولیات فراہم کی جائیں۔

 چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے بھی پولیس ٹریننگ سینٹر پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے شہید ہونے والے جوانوں کے لواحقین سے تعزیت اور زخمیوں کے لئے صحت کی دعا کی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*